0

پاکستان نے 88 سے زائد دہشتگرد تنظیموں اورعناصر پر سخت پابندیاں عائد کردیں

کالعدم تنظیموں سے منسلک عناصر کی منقولہ غیرمنقولہ جائیدادیں ضبط ، ہتھیاروں کے حصول سمیت سفری پابندیاں عائد، کالعدم تنظیموں اور منسلک افراد پر پابندیوں سے متعلق نوٹیفکیشن جاری

اسلام آباد ( آئی پی پی ) پاکستان نے 88 سے زائد دہشتگرد تنظیموں ،عناصر پر پابندی عائد کردی، کالعدم تنظیموں اور منسلک افراد پر پابندی سے متعلق نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا گیا، ان عناصر کی منقولہ غیرمنقولہ جائیدادیں ضبط ، ہتھیاروں کے حصول سمیت سفری پابندیاں عائد کردی گئیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان نے دہشتگردوں کیخلاف بڑا قدام اٹھا لیا ہے۔
اقوام متحدہ کی طرف سے دہشتگرد قرار دی گئی کالعدم تنظیموں اور افراد پر سخت پابندیاں عائد کردی ہیں۔کالعدم اور شدت پسند تنظیموں طالبان، داعش، دیگرسے منسلک افراد کے اثاثے اور جائیدادیں فوری ضبط یا منجمد کرنے کا حکم دے دیا ہے۔ کالعدم تنظیموں سے منسلک افراد پرہتھیاروں کے حصول پر بھی پابندی عائد کردی گئی ہے۔

وزارت داخلہ کی جانب 18اگست سے کالعدم تنظیموں سے متعلق نوٹیفکیشن کا بھی اجراء کردیا گیا ہے۔

نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں داعش، القاعدہ ، طالبان اور دیگر تنظیموں کے 88 سے زائد دہشتگرد عناصر پر پابندیاں عائد کی گئی ہیں۔ ان عناصر کی منقولہ غیرمنقولہ جائیدادیں فوری ضبط کرلی گئی ہیں۔ بینکوں اور دیگر فنانشل اداروں سے مالیاتی خدمات کی فراہمی اور بیرون ملک سفر پر بھی پابندی عائد کردی گئی ہے۔واضح رہے قومی اسمبلی میں انسداد دہشتگردی ترمیمی بل 2020ء منظور بھی کیا گیا ہے، انسداد دہشتگردی ترمیمی بل کے متن میں کہا گیا کہ کالعدم تنظیموں اور ان سے تعلق رکھنے والوں کیلئے قرضہ یا مالی معاونت پر پابندی ہوگی۔
کوئی بینک یا مالی ادارہ ممنوعہ شخص کو کریڈٹ کارڈ جاری نہیں کرسکے گا۔ پہلے سے جاری اسلحہ لائسنس منسوخ تصور ہوں گے۔منسوخ شدہ اسلحہ ضبط کرلیا جائے گا۔ منسوخ شدہ اسلحہ رکھنے والا سزا کا مرتکب ہوگا۔ایسے شخص کو نیا لائسنس بھی نہیں جاری کیا جائے گا۔دہشتگردی میں ملوث افراد کو 5کروڑ تک جرمانہ ہوگا۔ بل میں ممنوعہ اشخاص یا تنظیموں کے ساتھ کام کرنے والوں سخت اقدامات شامل کیے گئے ہیں۔ ممنوعہ اشخاص یا تنظیموں کے ساتھ کام کرنے والے افراد کی جائیداد بغیر کسی نوٹس ضبط یا منجمد کردی جائے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں